گوجرانوالہ ضلعی انتظامیہ اور PDM نے 28 نکاتی معاہدے کے بعد اجتماعات کا انعقاد کیسے ہوگا اس کے بعد یہ اجازت دی گئی۔

معاہدے میں کہا گیا ہے کہ تمام کاروناویرس ایس او پیز کو پورے اجتماع میں سختی سے نافذ کیا جائے گا ، اور یہ کہ شرکاء ماسک اور سینیٹائزر کے بغیر جلسا پنڈال میں داخل نہیں ہوں گے۔

منتظمین کو پنڈال کے داخلی راستے اور خارجی پھاٹک پر واک تھرو گیٹ اور سینیٹائزر لگانا ہوں گے۔ جلسہ کے مقام سے کچھ فاصلے پر کاریں کھڑی کرنے کی اجازت ہوگی۔ PDM پنڈال میں لائٹنگ کا انتظام کرے گا اور اس بات کو یقینی بنائے گا کہ پنڈال میں ہتھیاروں یا آتش بازی کا مظاہرہ نہ ہو۔

بیٹھنے کے انتظامات ایسے ہوں گے کہ حاضرین کے درمیان ہر وقت 3-6 فٹ کا فاصلہ ہو۔

پی ڈی ایم کو یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اس کا کوئی بھی رہنما جناح اسٹیڈیم کے علاوہ کسی اور جگہ تقریر نہیں کرے گا اور جی ٹی روڈ پر کوئی ‘خیرمقدم کیمپ’ نہیں ہوگا۔

دونوں فریقوں نے اس بات پر بھی اتفاق کیا ہے کہ اجتماع کے سلسلے میں کوئی وال چاکنگ / گرافٹی نہیں ہوگی ، اور متعلقہ محکموں سے اجازت حاصل کرنے کے بعد پارٹی بینرز لگائے جائیں گے۔

ضلعی انتظامیہ نے اس بات کی ضمانت بھی حاصل کرلی ہے کہ جو تقریر کی جارہی ہے اس سے قومی سلامتی کے کسی بھی ادارے کو نشانہ نہیں بنایا جائے گا اور نہ ہی کوئی بیان دیا جائے گا جو آئین سے متصادم ہوسکے۔

معاہدے کی خلاف ورزی کی صورت میں ضلعی انتظامیہ مناسب کارروائی کرنے اور پی ڈی ایم رہنماؤں کے خلاف مقدمات درج کرنے کی اہل ہوگی۔


YT چینل کو سبسکرائب کریں

Source by [author_name]

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here