بی ایم ایم ڈبلیو کی برقی وِنگ سوٹ کی مشق کا تجربہ پیٹر سالزمان ہے جو 300 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے پرواز کے کمرے سے چل رہا ہے۔  فوٹو: بی ایم ڈبلیو

بی ایم ایم ڈبلیو کی برقی وِنگ سوٹ کی مشق آزمائش پیٹر سالممان ہے جو 300 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے پرواز کے کمرے سے چل رہی ہے۔ فوٹو: بی ایم ڈبلیو

لائپزگ ، جرمنی: اب بی ایم ایم ڈبلیو کمپنی ایک برقی وِنگ سوٹ تیار ہے جو 300 کلومیٹر فی گھنٹہ کی انتہائی رفتار سے پرواز کی جاسکتی ہے۔ اس کا ڈیزائن ورکس اور ریساکی ڈائیرور پیٹر سیلزمان تعاون کے لئے تیار ہے۔

اس کے بی ایم ڈوبلیو نے نیا ادارہ تشکیل دیا ہے۔ اس طرح سے کسی کی مدد نہیں کی جاسکتی جو انسانوں کے لئے آسان ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اس آزمائش خود پیٹر سیلزمان کی نہیں ہے۔ اس آزمائش کی دو دہائی سے آسٹریائی ایلپس کے پہلوؤں میں جہاں برقی وِنگ سوٹ کی آزمائش جاری تھی۔

https://www.youtube.com/watch؟v=FGhtJnK9ZWA

پیٹر نے بی ایم ایم ڈبلیو کمپنی کا اعلان کیا ہے کہ وہ کامیابی سے آگاہ ہوسکتی ہے۔ اس سے ہمیں یہ معلوم ہوتا ہے کہ مقامات کی سعیدی اور ان کی بڑی تعداد میں افق دریافت ہیں۔ اس لباس کو پہننے کے ل 10 10 ہزار فٹ کی بلندی سے 10 ہزار فٹ کی طرح تیار کردہ پوشاک کو پہنا ہوا تھا۔ اس کے بعد انہوں نے برقی نظام کو روکنے اور اپنی رفتار سے بڑھا کر 300 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار تک رسائی حاصل کی۔

کمپنی کے مطابق عموماً وِنگ سوٹ سے 100 کلومیٹر کی رفتار تک رسائی حاصل کی جاسکتی ہے لیکن اب برقی نظام کی بدولت اس کی رفتار سے دورانیے سے آگے بڑھ رہی ہے اور وہ برق رفتاری سے فاصلہ طیبہ کے مقام پر ہیں۔ اس میں دو عدد کاربن امپیلر یا پنک پہنچ چکے ہیں جو 25 ہزار چکر فی منٹ کی گھڑیاں ہیں اور پانچ منٹ میں غیر معمولی طور پر دھکے دے رہے ہیں۔

دعویٰ کیا سوٹ کا پورا نظام ہے جس میں بہت ہلکا پھلکا ہوتا ہے اور اس پہلو پر پڑا جاتا ہے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here