آسٹریلیا کے رابرٹ ویبر 18 روزہ جنگ میں لاپتا اور صرف پانی اور مشرقی کھا کر زندہ ہے۔  فوٹو: سی این

آسٹریلیا کے رابرٹ ویبر 18 روزہ جنگ میں لاپتا اور صرف پانی اور مشرقی کھا کر زندہ ہے۔ فوٹو: سی این

کوئنز لینڈ: آسٹریلیا کے گارڈنگ جنگلات میں بھٹک جانے والے شخص کو 18 روز بعد بازیاب کرالیا گیا۔ رابرٹ ویبر جنوری کے پہلے ہفتے سے لاپتہ کیا تھا۔

چھ جنوری 2021 کو 58 سالہ رابرٹ کوئنز لینڈ کے ایک ہوٹل سے اپنے پالتو کتے باہر نکلے اور واپس نہیں آئے۔ پولیس ان کی تلاش میں گھنٹی جھڑیاں ، دریا اور ڈیم کا پورا علاقہ چھان مارا لیکن اس کا کوئی حصہ نہیں۔ لیکن 18 روز کے بعد ایک دوسرے شخص نے اس وقت ڈھونڈ نکالا جب وہ دریائی ڈم کے کنارے بیٹھے رہے۔

وہ رات کا ہوٹل واپس لوٹ گیا تھا اور اس نے جنگ میں کار موڑدی کے بارے میں بتایا تھا کہ فاصلہ اس وقت دوبارہ روڈ تک پہنچا تھا جہاں اس کی غلطی ہوئی تھی اور اس کی گاڑی سڑک سے دوری تک جا رہی تھی۔ بھٹک ہو۔ تین دن تک وہ آپ کی کار میں رہ گیا تھا اور اس کے بعد پانی ختم ہوگا۔

پانی کے خاتمے کے بعد وہ کار سے باہرنکلے اور مشکل سے ڈیم کے کنارے پہنچ گئے۔ اگلے 15 روز تک وہ جنگل سے مشروم کھا رہے ہیں اور پانی کا کر جن جان بچا رہے ہیں۔ وہ دیمک کنارے پر ہے اور دن بھر بھی وہ بیٹھے رہتے ہیں۔ یہاں تک کہ ایک شخص کو حاصل ہے اور رابرٹ اس کی روداد سنائی ہے۔ اس عرصے میں رابرٹ بہت کمزوری کا شکار ہے اور دس کلوگرام وزن کم ہوچکا ہے۔

اس کے فووراابر بعد رابرٹ کوک طبی امداد دے رہی ہے اور ان کی کٹیاں تلاش کر رہی ہیں۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here