شادی کی ڈور تقاریب پر 20 نومبر سے 31 جنوری تک پابندی عائد (فوٹو: فائل)

شادی کی ڈور تقاریب پر 20 نومبر سے 31 جنوری تک پابندی عائد (فوٹو: فائل)

اسلام آباد: حکومت نے کورونا وائرس کے بڑھتے ہوئے معاملات پیش کیے ہیں جو ملک بھر کی سرکاری و نجی صورتحال میں عملہ آدھا بلانے ہیں ، شادی کی ان ڈور تقاریب پر پابندی لگ رہی ہے اور مسک نہیں ہوسکتی ہے اس پر 100 واقعات ہوسکتے ہیں۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق قومی قومی معاہدہ سینٹر نے کل ملک بھر میں احتیاطی تدابیر کے دوسرے مرحلے میں نفاذ کا کیا مظاہرہ کیا ، دوسرے مرحلے کی نفاذ 31 جنوری 2021 ء کو ملک بھر میں کورونا ایس اور پیز پر سخت کارروائی ہوئی۔ درآمدی کوڈ تیار کیا جا۔۔

سرکاری و نجی درجے کا عملہ آدھا بلانے کا حکم

این سی سی کی بات ہے کہ کورونا کی بڑھتی ہوئی وبا کے دوران سرکاری و نجی ملازمین سے متعلق بینائی پالیسی پالیسی پر عمل درآمد کرایا کی رہائش پذیر ہے اور تمام سرکاری اور نجی مقامات کی ہدایت ہے کہ وہ کل کلک کو قبول کرے گی۔ عملہ بلائیں اور آدھے عملے سے گھر کے دفتری کام مکمل کرین۔

بند مقامات پر تقاریب پر پابندی

شادی کی تقاریب سے متعلقہ سی سی اورسیسی بات یہ ہے کہ اس واقعہ پر پابندی عائد ہونے والی شادی کی شادی کے سلسلے میں شادی کے تقاریب کے بارے میں 20 اگست کو شادی کے موقع پر ہونے کی اجازت نہیں ہے۔ ایک ہزار تک مہمان والے ہوسکیں گے۔

کون کون سے شہر شامل؟

لاہور ، اسلام آباد ، راولپنڈی ، ملتان ، حیدرآباد ، گلگت ، مظفر آباد ، میرپور ، پشاور ، کوئٹہ ، گوجرانوالہ ، گجرات ، فیصل آباد ، بہاؤولپور ، ایبٹ آباد۔ شامل ہیں۔

دوسرے مرحلے میں فیس بک کا ماسک گلگت بلتستان ماڈل پر عمل درآمد کر رہا ہے ، گلگت بلتستان کی طرز زندگی پر ماسک نہیں ہوسکتی ہے اور اس کا کوئی مسئلہ نہیں ہے 100 گناہ کی فراہمی۔



Source by [author_name]

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here