شہزادی کو پرنسس بیلجیئم کا خطاب بھی دیکھا ، فوٹو: ٹویٹر

شہزادی کو پرنسس آف بیلجیئم کا خطاب بھی دیکھا ، فوٹو: ٹویٹر

برسلز: بیلجیئم کی عدالت نے 52 سال کی عورت کے بادشاہ کے ساتھ ڈیڈی ای میچ ہونے پر شہزادی کا درجہ دیدیا جس کے بعد حاصل پرنس آف بیلجیئم پکارا گیا۔

عالمی خبر رسالہ کے مطابق بیلجیئم کی مصورہ 52 سالہ ایلفائن بوئیل نے عدالت میں درخواست کی تھی کہ اس ملک کے سابقہ ​​بادشاہ البرٹ دوم بیٹی نے اسے قبول نہیں کیا تھا۔ یہ معزز عدالت میرا حق ہے اور وہ تمام اعزازات دلائے جو دیگر شہزادوں اور شہزادوں کی دکانیں خرید رہے ہیں۔

عدالت میں عورت کے دعویٰ پر مقدمہ کی سماعت اور خواتین کی عدالت کے بارے میں حکم دیا گیا تھا کہ بادشاہ البرٹ دوم سے میچ کرگیا جس عدالت میں عورت کی بادشاہی کی بیٹی کو تسلیم کیا گیا تھا کہ وہ شہزادی اعزاز سے نوازا اور سارے اعزازات ہیں؟ زراعت بھی حکم دے رہی ہے جب بادشاہ کوٹ میں بھی لوگوں کو اخراجات سے دوچار کرے گا۔

ایلفائن بوئیل کے بارے میں 1990 میں یہ بات سامنے آرہی تھی کہ وہ بادشاہ کی بیٹی ہے لیکن اس کے باوجود پہلی بار عدالت نے ان کا حکم دیا تھا۔ بادشاہ کی عدالت میں روزانہ کی بنیاد پر 5 ہزار 800 ڈالر جرمانہ عائد کرنا تھا جس کے بعد بادشاہ نے عورت کی بیٹی کو تسلیم کیا تھا۔

83 سالہ البرٹ ڈوم 1993 سے 2013 تک بیلجیئم کے بادشاہ اور پھر کسی بیٹے شہزادہ فلپ کو اس قسم کا سونپ دی تھیم۔ ان کی اہلیہ ملکہ پاؤلا نے بادشاہ دوم کی ایک بائیوگرافی میں اور خاطون سے بیٹی کی تذکرہ پہلی بار 1999 میں کی تھی۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here