امریکی ماہرین نے دنیا کی سب چیزوں سے چھوٹی میموری تیار کی ہے۔  فوٹو: یونیورسٹی آف ٹیکساس

امریکی ماہرین نے دنیا کی سب چیزوں سے چھوٹی میموری تیار کی ہے۔ فوٹو: یونیورسٹی آف ٹیکساس

آسٹن: ٹیکساس یونیورسٹی کے ماہرین نے ڈیٹا محفوظ کیا تھا ، دنیا کی سب سے چھوٹی آلہ ایجاد تھی جو دو جہتی (ٹوڈی) مٹیریل سے تیار کی گئی تھی اور جس کی وجہ سے یہ ایک نیا ماٹر تھا۔ سائنسدانوں کا ‘ایٹم ریمسٹر’ نامزد نہیں ہوا ہے ، جس کا مطلب یہ ہے کہ یہ ٹرانسپورٹر جو ایٹمی پیمانے پر ڈیٹا محفوظ ہے۔

یہ آلہ واحد (سنگل) ایٹموں کی حرکت سے کام لے رہی ہے اور اس کی بدولت نہیں ، چھوٹے میموری آلات میں معلومات اور ڈیٹا کا انبار ہو جاسکے ہے۔

یہ آلہ برقیات کی بات ہے۔ ‘میمرسٹر’ سے تعلق رکھتے ہیں۔ اس میں مزاحمت سوئچ کے درمیان ڈیٹا موجود ہے۔ جب ایک خاص مادے پر خاص وولٹیج لیا جاتا ہے تو اس سے برقی مزاحمت بدلی جاتی ہے یا سختی کی جاتی ہے یا پھر مضبوطی پیدا ہوتی ہے۔ اس مظہر کوٹا ڈیٹا لکھنے اور مٹانے استعمال کرنے کا طریقہ ؛ اور آخر میں اسی طرح کے مزاحمت عمل کو محفوظ شدہ ڈیٹا پڑھنے کو بھی استعمال کریں۔

جب نینومیٹر پیمانے پر بنائے ہوئے سوروراوں میں سے کسی چیز کا پتہ چلتا ہے یا اس کے اندر داخلہ لیا جاتا ہے تو مٹیریئل کی موصلیت (کنڈکٹیوویٹی) بدلتی ہے۔ اس طرح کی سائنسی معلومات سے ایٹمی سطح پر ڈیٹا کو محفوظ کیا جاسکتا ہے۔ اس کیلیے مولبڈینم ڈائی سلفائیڈ کو استعمال کریں۔ لیکن عدنین کے عمل سے بہت ساری مادوں پر آزمائش ہوتی ہے۔

اس طرح کی دنیا کی سب سے چھوٹی میموری ہے جو ایٹمی پیمانے پر بنائی ہو رہی ہے۔ یہ ” ریمسٹر ” چلانے والے ماہرین نے مولبڈینم ڈائی سلفیڈ کوٹ کیا ایک نیومیٹر لمبے اور ایک نینوومیٹر کے ٹکڑوں میں تقسیم کیا تھا جس میں صرف ایک ایٹم جٹنی تھیم تھا۔ اس طرح نظریاتی طور پر ایک مربع سینٹی میٹر کا ٹکڑا 25 ٹیرابائٹ جتنا ڈیٹا محفوظ ہے جس کا اندراج ہے ، جس میں فلیش میموری میں فی مربع سینٹی میٹر گنجائش بھی 100 گنا زیادہ ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اس کی سطح پر اسٹوریج کی توانائی بھی بہت کم ہے۔

یہ ایجاد جس طرح کی تجزیہ اور اوپن ایکیس ریسرچ جرنل ” نیچر نینو ٹکنالوجی ” تازہ شمارے میں شائع ہوا ہے ، مستقبل میں نیورومفریک کمپیوٹرنگ ، ریڈیو فریکوئنسی کمیونیشن کیشن اور بہت چھوٹی جگہ پر ڈیٹا سے محفوظ رہنے والے کاموں میں اہم کامیابی ہے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here