تیانگونگ 3 تمام حصوں کی زمین پر الگ الگ تیار ہوجائے گی۔  (فوٹو: چائنا ڈیلی)

تیانگونگ 3 تمام حصوں کی زمین پر الگ الگ تیار ہوجائے گی۔ (فوٹو: چائنا ڈیلی)

بیجنگ: چینی خلائی ایجنسی نے اپنے خلائی اسٹیشن میں ‘تیانگونگ 3’ کے عملے کے بارے میں مزید 18 ناموں کا اعلان کیا جس میں 17 مرد اور ایک عورت شامل تھیں۔ قبل ازیں اسی خلائی اسٹیشن میں 21 افراد منتخب ہوئے تھے۔ اس طرح چینی خلائی اسٹیشن بھیجنے والے افراد کی تعداد 39 درجے کی ہے۔

اس میں ساتھیوں سے پیسلٹ بنائیں گے ، سات افراد کو فلائٹ انجینئرز کی تربیت دی جائے گی جبکہ باقی چاروں ” مشن پونے لوڈ اسپشیلٹس ” کے فرائض انجام دینے کی اجازت دی جائے گی۔ بہت عملے کی تربیت کا آغاز بھی جلد ہی ہوا تھا جو تقریبا ایک سال تک جاری رہتا تھا۔

چین کی خلائی اسٹیشن ” تیانگوگ 3 ” (آسمانی محل) خلائی اسٹیشن پر 2016 میں کام شروع کیا گیا تھا۔ اس سے پہلے دو تجرباتی ماڈیولز (تیانگونگ 1 اور تیانگونگ 2) خلا میں بھیجے گئے تھے۔

تیانگونگ 3 آپ کی جسامت میں سابق روسی خلائی اسٹیشن ” میر ” جتنا نہیں ہے لیکن ماڈیولر انداز میں تیار کیا ہوا ہے۔ اس سے یہ سارے حص زمینے زمین پر تیار ہوں گے جن بعد بعد بعد ازاں خلاء میں ہوں گے۔

چینی خبر رساں ایجنسی کا کہنا ہے کہ تیانگونگ 3 کا سامان لے کر 2021 میں کسی وقت روانہ ہوسکتی ہے اور اس کی تعمیر کا آغاز کرسی میں ہوتا ہے ، جو 2022 میں مکمل طور پر ہوتا ہے۔

اندازہ یہ ہے کہ مکمل مشکلات کے بعد اس خلائی اسٹیشن 80 ٹن سے 100 ٹن جتنا وزنی اور ممکنہ طور پر اس کے لانگ مارچ 5 بی ” راکٹ کے چار حصے (ٹکڑے کی شکل میں) زمین کے گرد نچلے مدار میں واچایا نہیں ہوں۔ یعنی یہ 340 سے 450 کلومیٹر کے بلندی پر رہائش پذیر زمین کے گرد چکر لگائے گا۔

2022 میں مکمل مشقت کے بعد اس خلائی اسٹیشن اگلے 15 سال تک کام کریں گے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here