چین کے دفتر خارجہ کے ترجمان وانگ ویبائنائن نے سنیئر سفارتی اہل کار کے عمل کو کوڈ نہیں کیا۔ (فوٹو ، فائل)

چین کے دفتر خارجہ کے ترجمان وانگ ویبائنائن نے سنیئر سفارتی اہل کار کے عمل کو کوڈ نہیں کیا۔ (فوٹو ، فائل)

بیجنگ: ٹی شرٹ سے شروع ہونے والے تنازع میں چین نے کینیڈا کی اسٹائل مسترد کردی۔

چینی خبر رسالہ کے مطابق بدھ کو چین کے دفتر خارجہ کی ترجمان وانگ ویبائن نے کہا کہ اس بات کا یقین نہیں ہے کہ کینیڈا کا ایک سنیئر سفارتی اہلکار جو طویل عرصے سے چین میں مقیم ہے وہ اتنی احمقانہ غلطی کا مرتکب ہے۔ کینیڈا کی یہ بات قابل قبول نہیں ہے کہ ٹی شرٹ پر بنو نقوش ووہان کا نام اور چمگڑڑ محض مماثلت سے ہیں۔

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ کینیڈا کے سفارتی اہل کاروں کی نقل و حرکت کی وجہ سے چینی عوام میں غم و غصہ پایا علاج ہوسکتا ہے ، کینیڈا اس معاملے پر سنجیدگی کا مظاہرہ کرسکتا ہے اور چین کو اس واقعے سے جلد پیش کش کی پیش کش ہے۔

قبل ازیں کینیڈا کی وزارت خارجہ نے خود شرٹ سے متعلق معاملات پر مبنی بیان دیا تھا ، غلط فہمی سمجھوتہ ہوا تھا اور اس کے سامنے پیش پیش ہونے والے افراد کے ڈیزائن کی وجہ سے چمکادڑ کی تصویر سامنے آسکتی ہے اور وہ بھی کسی طرح کی بات نہیں تھی۔

یہ خبر بھی پڑھیں: ایک ٹی شرٹ پر تنازعی کینیڈا اور چین میں تعطیلات کے خاتمے کے واقعات

واضح رہے کہ اس تنازع کا آغاز اس وقت ہوا جب چین کا میڈیا میڈیا ایک تصویر گردش کر رہا ہے جس کی وجہ یہ ہے کہ کینیڈا کے سفارتی عملے میں شامل تھے ایک شخصی ٹی شرٹ آرڈر واقعہ جس نے چمگادڑ بنا ہوا تھا۔ اس تصویر کو کورونا وائرس کے بارے میں یہ تھیوری کے بارے میں اشارہ سمجھا گیا ہے جو وہاں موجود جانوروں کی ایک مارکیٹ میں فروخت ہونے والی چمگادش وائرس سے متاثر ہوا ہے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here