'فار فار آؤٹ' کی خیالی تصویر۔  (بحوالہ: یونیورسٹی آف ہوائی)

‘فار فار آؤٹ’ کی خیالی تصویر۔ (بحوالہ: یونیورسٹی آف ہوائی)

ہوائی: یہ ایک چھوٹا سیارہ (سیارہ) ہے جس میں صرف 400 کلومیٹر لگائے جاتے ہیں۔ سورج سے اس کا فاصلہ تقریباً 20 ارب کلومیٹر ہے ، یعنی زمین کے مقابلہ میں 132 گنا زیادہ ہیں اور اسی وجہ سے سائنسدانوں نے اسے فارس آؤٹ قرار دیا ہے۔

2018 2018 میں 2018 ء میں یونیورسٹی آف ہوائی کی رصدگاہی سے دریافت کرنے کے بعد ماہرینِ فلکیات نے ان کا کہنا تھا ” 2018 2018 اے اے ء کی جی 37 37 ” کا عارضی نام نہیں تھا ، لیکن اس کا فاصلہ کتنا نہیں تھا جس کی جگہ بہت آہستہ سے تبدیل ہوگئی تھی۔ ہے۔

مختلف دوربینوں سے دو سال تک محتاط مطالعہ کرنا بعد میں سائنسدانوں نے انکشاف ہوا کہ سورج سے اس کا فاصلہ 132 فلکیاتی اکائیوں جتنا (تقریباً 20 ارب کلومیٹر) ہے۔

واضح ہے کہ زمین اور سورج اوسط درمیانی فاصلے کو ” ایک فلکیاتی اکائی ” کے قریب تقریباً 15 کلومیٹر فاصلہ بنتا ہے۔

اب تک کی تحقیق سے ” فار فار آؤٹ ” کے بارے میں مزید معلومات حاصل کی جاسکتی ہیں کہ سورج کا دائرہ اس کا مدار انتہائی بیضوی (کسی لمبوترے انڈے جیسا) ہے۔

175 فلکیاتی اکیوں جتنا سے کم فاصلہ صرف 27 فلکیاتی اکائیاں جتنا رہائش پذیر ہیں ، جو سیارہ نیپچون اور سورج درمیانی فاصلے سے بھی کم ہے۔

واضح رہے کہ سورج سے پلوٹو کا زیادہ فاصلہ 49 فلکیاتی اکائیوں کا ہوتا ہے۔

اس وقت نظامِ شمسی میں دوسرے دور کے فلکی اجسام میں ‘فار آؤٹ’ ‘کا سورج فاصلہ 124 فلکیاتی اکائیوں جتنا اور’ ‘گوبلن’ ‘کا فاصلہ 80 فلکیاتی اکائیوں کے ساتھ ہے ؛ لیکن سائنسدانوں کا حساب کتاب نہیں ہے ، لیکن وہ اس سے زیادہ فاصلہ 2300 فلکیاتی اکائوں تک جاسکتے ہیں۔

ماہرینِ فلکیات کے انداز میں کہا گیا ہے کہ ” فار فار آؤٹ ” اور نیپچون کے مدار ایک دوسرے کے قریب رہائش پذیر ہیں اور شاید اس کی وجہ یہ ہے کہ فارس آؤٹ کا مدار اتنا زیادہ لمباٹرا اور بیضوی مقام ہے۔

فارس آؤٹ پر مزید تحقیق ابھی جاری ہے ، جس کے بعد اس کی مزید خصوصیات بھی روشنی ڈالی جاسکے گی۔ لیکن اس میں مزید کچھ سال لگیں گے۔

اس کے بعد کوئی باقاعدہ نام نہیں لیا گیا۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here