والدین یہ سب جان سکتے ہیں۔  فوٹو: فائل

والدین یہ سب جان سکتے ہیں۔ فوٹو: فائل

آن لائن کلاسوں کی وجہ سے اب موبائل فون کا استعمال نوجوانوں کے لئے کافی ضروری ہے ، کیوں کہ زیادہ تر گھر والوں میں لیپ ٹاپ یا کمپیوٹر کی بات ہے ‘اسمارٹ فون’ پر ہی اس کی کلاسیں لی جاتی ہیں؟

نوجوانوں کی نسبت چھوٹی چھوٹی چھوٹی موبائل فون تک رسائی اور ‘آن لائن’ کلاسوں کی وجہ سے ہر وقت موبائل کا استعمال ایک خطرناک صورتحال ہے۔

آن لائن آن لائن کلاسوں سے پہلے یا اس کے بعد کے ویڈیو پروگرام یا دیگر مشاغل کے ایپس کے استعمال کا رجحان پیدا ہو گیا تھا ، چلاس کی کلاسوں کے بارے میں وٹس ایپ گروپ بن چکے ہیں ، اس کی چھوٹی عمر کی عمر غیر شادی سے پہلے ہے۔ ضروری پیغامات بھیجنے اور وصول کرنے کے لئے انتظار کرنا ایک بہت ہی قیمتی وقت بھی ہے اور یہ بھی زیادہ پریشان کن معاملہ ہے جو غیر مناسب ویب سائیٹ ہے ، جو اب 13 سال کی سالانہ رپورٹ میں آگیا ہے۔ خطرناک دنیا کی انگلی کی ایک ‘جنبش’ فاصلے پر ہے ، جو معصوم ذہینوں پر انتہائی منفی زندگی مرتب کرتے ہیں۔

گویا ایک مہلک ہتھیار کے سبھی ہاتھ آتے ہیں ، جن کا ذہن ، جسمانی ، جذباتی نشونما کو بدترین ہوتا ہے اور والدین جس طرح کی کتنی بھی کوشش کرتے ہیں ، وہ خود کو کوس کے ناگہانی آفت سے نہیں بچا سکتے ہیں۔ وہ ہر وقت نگران رہائش پذیر ہوسکتی ہے ، کیوں کہ آن لائن کلاسیوں کی وجہ سے جواز ملزمان کی بات ہے کہ وہ صرف موبائل ہی کرسکتے ہیں۔

بعض اوقات آن لائن کلاسوں کا وقت تھا ، اس سے پہلے والدین کے ساتھ کچھ دن پہلے کوئی بات نہیں ہوسکتی تھی ، جس کی وجہ سے موبائل کی سرگرمی کی دکانیں مکمل طور پر باخبر رہائش پذیر ہوتی تھیں۔ آج کل موبائل سے آزادانہ طور پر موبائل فون کا استعمال کرنا ممکن ہے اور اب آپ ان کو بھی نہیں دیکھ سکتے ہیں۔ یا ہر وقت موبائل فون آئے ہو؟ اس وجہ سے کہ آپ بچہ آپ کوٹ آسانی سے لے جا رہے ہو آن لائن کلاسوں کو آن لائن کلاس دے رہے ہیں ، یا وٹس ایپ گروپ سے اسکول کے اسائمنٹ کی بات ہے ، لہٰذا اس سے پہلے کی طرح اب موبائل پر پابندی لگانا ہے یا اس کا استعمال ہے۔ کسی بھی چیلنج سے روکنا نہیں؟

اس طرح کے واقعات میں ہمارے بچوں کے لئے ایک ویڈیو گیم سائبر کرائم کے چنگل سے بچ بچے والی والدین کو چوکنا جگہ کی ضرورت ہوتی ہے؟ چناں چہ اسی خطرہ کے پیش نظر سوفٹ وئیر کمپنیاں موبائل کی مانیٹرنگ ایپس تیار ہیں ، جو چھوٹی آن لائن سرگرمی والی دکانوں کے بارے میں والدین کو فوراً الرٹ جاری رہتی ہیں ، جن کے بارے میں جاننا آج کے والدین کی کوئی حد نہیں ہے۔ اس ضمن میں مندرجہا سب سے آسان ایپس بہ آسانی گولی پلے اسٹور سے ڈاؤن لوڈ کی جاسکتی ہیں

ٹریک اِٹ ایپ (ٹریکائٹ ایپ)

اس ایپ کی خوراک کی آن لائن سرگرمی والی دکانوں سے متعلق مکمل معلومات حاصل کی جا سکتی ہیں ، اس کی بدولت والدین براؤزر اور میسج پر آسانی سے نظر آتی ہیں ، یہاں تک کہ آن لائن گیم پر بھی آپ جان سکتے ہو۔ وہ بچہ کون سا گیم کھیلتا ہے اور اس کا کتنا وقت ہوتا ہے۔ اس سے وائی فائی ٹریکنگ جیسی اہم معلومات حاصل کی جا رہی ہیں اور ٹریک والے فون پر نوٹیفیکیشن بھی موصول ہو جاتا ہے۔

ایم اسپائے ایپ (mSpy ایپ)

اس ایپ کی خاصیت یہ ہے کہ فون پر زبردست طریقہ سے مانیٹرنگ کرنا ہے۔ اس سے آپ کے موبائل فون پر بھی کال کی بات کی جاسکتی ہے اور براؤزر کی تاریخ مکمل جان کاری ، کال لاگنگ اور پیغامات بھی دیکھ سکتے ہیں ۔۔۔

دی ٹرتھ اسپائی ایپ (سچائی اسپائی ایپ)

اس ایپ کی ٹریکنگ کی وجہ سے لوگوں کو گمشدہ ڈیوائس کا کھوج لگ سکتا ہے ، اس ایپ میں براؤزر اور ‘جی پی ایس ایس اسٹسٹم’ کی نگرانی شامل ہے۔ مفت دست یاب یہ اینڈرائڈ ایپ والدین ہیں جو بروکٹ درست مقام کو ٹریک کرتے ہیں اور خود بھی ان کی خوشنودی رکھتے ہیں۔

اسپائزی ایپ (اسپائی زئی ایپ)

یہ آسانی سے انسٹال والی والی ایپ کی طرح سے فون پر آرہی ہے جس کا مانیٹرنگ کا کام سرانجام دیتی ہے ، اگر آپ بچوشل میڈیا پر زیادہ وقت پر گزارتا ہے ، تو پریشانی کی بات نہیں ہے ، آپ اس ایپ کے پیغام کو بھیج سکتے ہیں اور وصول کرتے ہیں۔ نہیں۔ یہاں تک کہ ان کو محفوظ رکھنے والے ملٹی میڈیا مواد کو ڈاؤن لوڈ کرنے کی بھی دیکھ بھال کر سکتے ہیں۔ اس ایپ کی کلیدی لاگر

چلڈرن ٹریکنگ

یہ ایپ والدین کی نعمت ہے۔ یہ دیگر اینڈرائیڈ ‘ایپ’ سے ذرا مختلف ہے۔ اس بات کی اطلاع نہیں ہے کہ صرف آن لائن سرگرمی کی دکانوں سے باخبر مائیں معاون ہیں ، لیکن جسمانی طور پر بھی وہ کچھ نہیں مل سکتی ہے جو اس وقت موجود ہے۔

فامی سیف ایپ) (فامی سیف ایپ)

فامی سیف مانیٹرنگ ایپ ونڈر کمپنی بنائی ہے ، اس کی وجہ یہ بہت آسان ہے کہ والدین بہ آسانی آسانی سے موبائل پر رسائی حاصل کرسکتے ہیں اور ان کی طرح کی نگرانی کا پاس ہر وقت موجود ہے۔ بھی ضرورت نہیں ہے ، کیوں کہ والدین ‘جییو فینسنگ فیچرز’ کے بچوں کے بارے میں معلومات نہیں رکھتے ہیں ، اس کی سائٹ پر دکانیں نظر آتی ہیں۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here