لگتاور لگتا لگتا لگتا جیسے جیسے جیسے جیسے کسی جیسے کسی کسی جیسے کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی مزد مزد مزد مزد مزد مزد مزد مزد مزد مزد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد۔۔ بعد بعد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔اریاری۔۔۔۔۔۔۔۔  (تصاویر: رالف لارین)

لگتاور لگتا لگتا لگتا جیسے جیسے جیسے جیسے جیسے کسی کسی جیسے کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی کسی مزد مزد مزد مزد مزد مزد مزد مزد مزد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد بعد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔اری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (تصاویر: رالف لارین)

پیرس: ڈیمری (اوورآل) متعارف کروائی جس جگہ کی جگہ کی جگہ پر رنگ برنگی ہے اور یہ لاکھوں کچیلی نظر آتی ہے۔ اس کی قیمت بھی 620 سالوی پاؤنڈ یعنی سوا لاکھ پاکستانی بھی زیادہ رکھی ہوئی ہے!

یہ دیکھنا کوئی مزدور نہیں ہے سارا دن رنگین اور صحت بخش کرنے کے بعد ، ابھی ابھی کام کرنے سے پہلے ہی یہ ڈانگری اتاری ہے۔ رالف لارین نے اسے ” پینٹ اسپلیٹر کور آل ” کا نام نہیں دیا۔

اس سے پہلے کوالیٹی کی کالی ڈینم تیار ہوگئی ہے۔ ‘معیاری رنگ’ کی جگہ سے سفید اور نارانجی دھبوں کے علاوہ بھی ان لوگوں کو نظر آرہی ہے۔

میڈیا میڈیا اس ڈیزائنر ڈانگری کو طنز اور تحریک کی نشانی بنا رہا ہے لیکن رالف لارین کمپنی بڑے فخر کے ساتھ آن لائن فروخت کر رہی ہے۔

لیکن یہ پہلا موقع نہیں ہے جب کسی بڑے پیمانے پر پرانی اور گندی نظر آتی ہے لیکن مہنگا داموں کی قیمتوں میں پیش پیش نہیں ہوتا ہے۔ موسم ماہ ” گوچی ” بھی ایک لاکھ کچیلی پینٹ متعارف کروا احتجاج ہے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: کیا آپ سوا لاکھوں میں پرانی جینز خریدیں گے؟

یوں لگتا ہے جیسے سوشل میڈیا پر تنقید سے رالف لارین کو نقصان تو نہیں پہنچا لیکن فائدہ ضرور ہوا ہے کیونکہ اس طرح ان لوگوں کو بھی اس ڈیزائنر ڈانگری کے بارے میں پتا چل گیا ہے جو اس بارے میں نہیں جانتے تھے. ان شاءاللہ میں شوق کا کوئی مول نہیں ہوگا ” محاورے پر عمل نہیں ہوگا ”۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here