نیویارک میں تھری ڈی پرنٹر سے چھپپھا اس گھر کی روایتی مکان سازی کے اخراجات میں نصف کمی واقع ہوئی ہے۔  فوٹو: سی این این ایس ٹی ٹی وی

نیویارک میں تھری ڈی پرنٹر سے چھپپھا اس گھر کی روایتی مکان سازی کے اخراجات میں نصف کمی واقع ہوئی ہے۔ فوٹو: سی این این ایس ایس ٹی وی

نیویارک: امریکہ میں دنیا کی سب سے بڑی تھری ڈی پرنٹڈ گھر کی پیش کش ہوئی ہے جس کی قیمت دو لاکھ نانوے ہزار ڈالر رکھی ہے۔

نیویارک کی مِل بروک لین واقعہ میں یہ گھر 1400 مربع فٹ کی رہائشی جگہ کی فراہمی ہے جس میں تین بیڈروم ، دو باتھ روم اور 750 مربع فٹ کا گیراج بھی شامل ہے۔ ایس کیو فورٹ ڈی نامی کمپنی اس جدید ترین تھری ڈی پرنٹنگ مشینوں میں سے صرف آٹھ روز میں تعمیراتی ہے۔

ایس کیو فورٹی ڈی روبوٹ مشینوں نے مزدوروں کی ضرورت سے زیادہ کام کرنے کے لئے خود کو انداز سے کام لیا جن میں صرف ایک بھل کے تین افراد موجود تھے جن کی نگرانی میں پہلے 41 فیصد گھر تیار تھے۔ اس طرح بہت تیزی سے اور کم لاگت والے گھروں میں بنائے جاسکے ہیں۔

واضح طور پر امریکہ اور بالخصوص نیویارک میں مکانات بہت مہنگے ہیں۔ اگر کوئی تھری ڈی اسٹائل میں تعمیراتی کام ہوتا ہے تو اس سے 50 فیصد تک کم خرچ پڑتا ہے۔ اسی علاقوں میں روایتی طریقوں سے تیار شدہ گھروں کی قیمت کم 5 لاکھ 40 ہزار ڈالر ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ ارزان تھری ڈی گھروں کی عوامی مشکلات کا ازالہ اور سستے گھروں تک رسائی میں مدد حصے کا حصہ ہے۔

اس کامیابی کے بعد ایس کیو فورڈ ڈی کمپنی کی دیگر ریاستوں میں بھی تھری ڈی مکانات کا منصوبہ بنارہی ہے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here