بیجنگ:ایک چینی کمپنی کے اس وقت کی پریشانی کی وجہ یہ ہے کہ وہ بیت الخلا میں ملازمت کے وقت کو قابو کرتے ہوئے سینسر اور ٹائمر لگاتا ہے۔ کمپنی چاہتی ہے کہ ملازمت کا کام ہو اور پیداوار میں اضافے کی وجہ سے ٹوالیٹ نہ ہو ٹوالیٹ میں بیشتر لوگوں کی تعداد ہو۔

بیجنگ میں واقع کمپنی کمپنی نے اپنی کمپنی میں ملازمین کو بیت الخلا میں ڈیجیٹل ٹائمر اور سینسر لگائیسٹ کو دکھایا۔ کسی ہی ٹوائلٹ میں نہیں آرہا ہے اس سے دوری پڑھ رہی ہے۔ اس عجیب اور غریب ویڈیو کا ویڈیو اور تصاویر میڈیا پر وائرل ہو جانے کے بعد ایک طویل بحث چھڑککی ہے۔

کچھ افراد اپنی کمپنی کا لالچ ٹھیکیدا کرتے تھے۔ کچھ لوگوں کی کمپنی کے لوگوں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔ لیکن کچھ لوگوں کے مطابق کمپنی کا حق بجانب ہے ، چینی لوگوں نے بھی اپنے فون پر مصروف رہنا ہے۔

مسلسل پریشانیوں کے بعد قوائی شو کمپنی نے آپ کو مطمیئن کرنا تھا باسابطہ پریس ریلیز کی کمرہ پیش کی۔ کمپنی نے کہا کہ وہ ملازمت پر کوئی قدغن نہیں لگ رہا ہے اور نہ ہی بیت الخلا کی شادی قلت ہے اور اسی طرح کی سنگینی اس کے تحت کام کررہی ہے۔

اس عمارت کے ڈیزائن کے تحت وہاں مزید ٹوائلٹ نہیں بنائے جاسکے ہیں۔ کمپنی نے مزید کہا کہ بیت الخلا کا ڈیٹا لے جانا ہے جس کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ کام کے اوقات میں کتنے عیاں ہیں ٹوائلٹ درکار ہوں گے۔

اگرچہ یہ بات قابل قابل فہم ہے لیکن لوگوں کا غم اور غصہ ابھی کم نہیں ہوا۔ کچھ افراد الگ الگ ہیں جو ادارہ غلط بیانی سے کام لیتے ہیں اور صرف مال سے ہی غرض رکھتے ہیں۔ لیکن چین میں اہداف پورا نہیں کرنا اور کام میں غفلت کی سزا دینا اور بے بس عزیزی عام طور پر جنوری کے شکار ملازمین رہائش پذیر ہیں۔ اسی طرح ہانگ کانگ میں ایک کمپنی کی خبر آگئی ہے جو صرف دس منٹ کی مہلت دیتی ہے۔

پوسٹ بیت الخلا میں ٹائمر لگانے پر چینی کمپنی کا آغاز ہوا پہلے شائع ہوا ایکسپریس اردو.

Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here