لاس انجلس:ٹیکنالوجی کی دنیا میں اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ ، مصر کے ایک سائنسدان ڈاکٹر ماہر القادی نے ایک اور تکنیک وضع کی ہے جس کی بدحالی اب برف کی آگ بھی بجلی کی جاسکتی ہے۔

اس میں ٹرائبوالیکٹرک سادہ اصول کارفرما ہے جب یہ دو مختلف مادے (مٹیریل) آپس میں ملتے ہیں تو آپ چارج ہو چکے ہیں۔ قدرتی طور پر مثبت برقی چارج والے ہی ماہرین سے مختلف ہیں۔

‘برف سے پہلے ہی چارج نہیں ہو رہا ہے ، مخالف مخالف چارج والوں سے ملایا کیا بجلی کی بات ہے؟ یونیورسٹی آف کیلیفورنیا لاس اینجلس کے کیمیاداں مہرالقادی نے کہا نینوٹیک انرجی کمپنیوں کا سی ٹی بھی ہے۔ کبھی اس سے پہلے کی بات نہیں کی تھی۔

اگرچہ اب تک سارے علاقے کی ڈرائیوبوالیکٹرک نینوجنریٹر (ٹی ای این جی) تیار ہے جو بارش کے قطروں ، ہلکی حرکت ، ٹائروں کی رگڑ اور خصوصی بورڈ پر چہل قدمی سے بجلی کی تعمیر کا کام کررہی ہے۔ تحقیقی ٹیم کے دوسرے ممبر رچرڈ کینر نے بتایا کہ جب ایک ماسٹرائل الیکٹرون اتر کرسٹری مٹیریل پر راستہ ہے تو یہ عمل کوئ برق سکونی (اسٹیٹک الیکٹرسٹی) ہے۔

ماہرالقادی نے اس کے بارے میں بتایا تھا کہ مادے کی آزمائش میں جنی سلیکون میں شامل ہے اور اس سے بہتر کام نہیں ہوتا ہے۔ وہ تھری ڈی پرنٹنگ سے الیکٹروڈ تیار کرتا ہے اور خاص قسم کی چیزیں جو کچھ نیچے رہتی ہیں وہ بجلی کی بہت معمولی مقدار میں ہوتی ہیں۔ تاہم ٹی ای این جیسی میں شمسی پینلرس میں کمی کا دورانیہ کیا دستاویز ہے۔

ڈاکٹر ماہر اور دوسرے متعدد لوگ ہیں جو چار لاکھ 60 لاکھ مربع کلومیٹر کے رقص پر برف پڑھ رہے ہیں اور اس طرح کے بڑے پیمانے پر بجلی بنائی جاسکتی ہے۔ اگرچہ یہ برف پر چل رہا ہے یا پھسلٹا ہے تو آپ فون اور دیگر دستی آلات بجلی کی تیاری کر رہے ہیں۔

اس کے علاوہ برف سے بجلی رکھنے والوں کو موسمیاتی اسٹیشن اور دیگر آلات سے بجلی کی فراہمی ممکن ہے اور اس سے بیرونی علاقوں میں بجلی کی فراہمی کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ تحقیق نینو انرجی میں شائع ہے۔

پوسٹ برفباری سے بجلی والے والا انقلابی آلہ تیار پہلے شائع ہوا ایکسپریس اردو.

Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here