اسپیس ایکس کمپنی نے ایک ہی راکٹ کا 143 سیٹ سلائیٹ مدار میں بھیجنے کا مظاہرہ کیا ہے۔  فوٹو: فائل

اسپیس ایکس کمپنی نے ایک ہی راکٹ کا 143 سیٹ سلائیٹ مدار میں بھیجنے کا مظاہرہ کیا ہے۔ فوٹو: فائل

کیپ کناورل: 143 سیٹلائٹ مدار میں بھیجنا کوئی نیا ریکارڈ نہیں ہے۔

24 جنوری۔ اشیا رکھی جاتی ہیں۔

یہ مشن 16 دسمبر 2020 میں خلاء میں تھا لیکن پانچ مرتبہ مسلسل کوئی نہیں تھا ، کوئی ریکاوٹ نہیں آیا تھا جس میں خراب موسم سرِ فہرست ہے۔ آخرکار راکٹ نہیں آڑن بھری اور ایک منٹ 12 سیکنڈ بعد فالکن نائن میکس کیو درجات سے باہر آگیا جو میکانکی دباؤ خطرناک دورانیہ ہے۔ اس کے بعد دوسرا انجن اسٹارٹ سروس

ڈومینٹ 51 سیکنڈ کے بعد پیوستہ (سیٹلائٹ) والا حصہ الگ الگ اور راکٹ زمین پر آگیا دوبارہ استعمال کیا جا رہا ہے

اسپیکس ایکس اسمال سیٹ رائیڈ شیئرپروگرام کے تحت اس سیٹلائٹ بھیج رہے ہیں۔ اس کا کوئی راستہ قدرتی حد تک محدود نہیں بلکہ تھوڑا سا سیٹلائٹ کوٹ خلا میں بھیجنا ہے۔ اس سے چھوٹے سیٹلائٹ کے منصوبوں پر کام کرنا آسان ہے۔ اس میں 133 سیٹلائٹ امریکی حکومت اور نجی کمپنیوں میں بعض کیوب سیٹس اور مائیکروسیٹ سلائیٹ بھی شامل ہیں۔

اگرچہ دس بڑے سیٹلائٹ کا تعلق اسٹارلنک پروگرام سے ہے جو قطبینی مدار (پولرآربٹ) میں گردش کریں گے اور اس کی بدولت انٹرنیٹ کی عالمی سہولت مہیا کریں گے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here