طالبان جنگجو راستے میں آنے والے دو اہلکار اور اہلکار اسلحہ کے ساتھ بھی جاتے تھے ، فوٹو: فائل

طالبان جنگجو راستے میں آنے والے دو اہل فوجی اور اہلکار اسلحہ کے ساتھ ساتھ بھی گئے ، فوٹو: فائل

کابل: افغانستان میں طالبان جنگجو میں 16 سیکیورٹی کے اہلکار ہمیشہ موجود رہتے ہیں جب حملہ آور ہوتے ہیں تو دو شہری بھی کو کو یرغمل بنالیا اور راستہ سے چلتے اسلحہ کے ساتھ بھی جاتے ہیں۔

عالمی خبر رساں ایجنسی کے مطابق افغانستان کے صوبے کے کھڑکی میں سائیکل سوار طالبان جنگجو ایک چیک پوسٹ پر دھاوا بول دیا ، طالبان کے 16 سیکیورٹی اہلکار ہمیشہ موجود رہتے ہیں۔ بعد ازاں طالبان جنگجو دو فوجی اہلکار کو اغوا اور افغان فوج کا اسلہحہ اپنے ساتھ لے گیا۔

افغان فوج کے ترجمان کے بارے میں اپنے بیان میں بتایا گیا ہے کہ فوجی چیک پوسٹ پر حملہ ہوا وہ افغان خفیہ ایجنسی کے ماتحت ایک مقامی فوج سے متعلق تھا۔ حملہ آوروں کی تلاش میں سرچ آپریشن کا آغاز ہوا جب اس علاقے میں مزید نفری تعیناتی کیمپ جاری ہے۔

افغان طالبان نے دعویٰ کیا کیا ہے کہ مقامی طالبان کم فوجیوں کے ساتھ ایک چیک چیک پوسٹ پر آئے ہوئے ہیں۔ طالبان امن معاہدوں کا مسلسل مقابلہ کرتے رہتے ہیں۔

دوسری طرف تاحال طالبان کی طرف سے کوئی تبصرہ سامنے نہیں آیا ہے جب کہ عملاندوز طالبان کی حکومت کا قیام عمل میں لایا جاسکتا ہے جب وہ اس صوبے میں سیکیورٹی کے تحت موجود شہری ہیں اور جنگجوؤں کے درمیان جھڑپوں کا سلسلہ جاری ہے۔

صوبہ فرائع کی ایک چیک پوسٹ پر طالبان نے 5 فوجی اہلکاروں کو ہمیشہ رہنے دیا ، جب دو اہلکار کوکیفٹی حالت میں اسپتال منتقل ہوگئے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here