انتہا پسندی ہندوؤں نے اس کے بارے میں بتایا کہ لوجہاد کا نام دیدیا نہیں ہے۔  فوٹوانٹرنیٹ

انتہا پسندی ہندوؤں کے بارے میں اس کا کہنا تھا کہ ‘لوجہاد’ کا نام دیدیا نہیں ہے۔ فوٹوانٹرنیٹ

ممبئی: زیورات جانے والوں کو شوبھارتی جیولری نے ایک دن کی خبر دی ، دھمکی آمیز اور تعطیلات کے بعد ‘ہندو مسلم ہم آہنگی’ پر مبنی اشتہار ہٹادیا۔

پچھلے دو روز سے ہندوستانی جیولری برانڈ ‘تنشق’ کا نام انڈسٹری میں ٹرینڈ گیا تھا۔ اس گھر میں ایک ہندو لڑکی کا مسلمان گھر کی بہو کا مظاہرہ ہوا ، جس کی وجہ سے یہ بات پوری طرح سے چل رہی تھی۔ یہ ہر جگہ نہیں ہے۔

اس امیدوار میں ہنڈی کی خوبی اور خودکشی کے درمیان ہم آہنگی کا ایک خوبصورت پیغام دیاگیا ہے اور اس کا نام کسی جولیری کا ہے جس کا نام ‘اتحاد’ ہے۔ لیکن اس کی وجہ سے ہندوستان میں نیا ہنگامہ چل رہا ہے اور انتہا پسندی کے بارے میں بات نہیں ہے۔

تعطیلات ، واقعات اور حادثاتی دستکاری سے دستبردار ہونا لازمی نہیں ہے۔ جیولری کی انتظامیہ کے بیان کے مطابق یہ صرف مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھتا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ کچھ لوگوں کے جذبات مجروح نے اس سے کہا تھا کہ اس کے ساتھ ہی انہوں نے اپنا مطالبہ کیا تھا۔

ہندوستانی میڈیا رپورٹ کے مطابق بدھ کے روزنامہ کوٹ لوگوں نے جولیری برانڈ کے اسٹاک پر حملہ کیا تھا اور اسٹاک کے مینیجر سے زیادہ معافی نام بھی لکوایاگیا تھا۔ جب کہ گجرات کے مینیجر نے اس واقعے سے لاعلمی کا اظہار کیا تو انہوں نے کہا کہ اسٹور پر پولیس کی نفری بڑھادی تھی۔

جولیری کی پہلی مرتبہ چھٹی والے دن واپس آئے ہوئے ‘بائے کوٹ تنش’ کے ہیش ٹیگ واقعے پر ٹرینڈ واقعات جہاں کچھ لوگوں کی بات تھی اس نے اس دعوے پر زور دیا کہ ‘لو جہاد’ کا نام دیاجارہ تھا۔ لوگ آپ کے ساتھ زیادہ تر انحصار کرتے ہیں جن سے انسانوں کے جذبات مجروح ہوتے ہیں۔

واضح رہے کہ ‘لوجہاد’ ہندو انتہا پسندوں کا انتخاب ایک خاص اصطلاح ہے جو اس وقت کسی مسلمان کی ہندو لڑکی سے شادی کروا رہا ہے۔ اس سے شادی کی اوراس کامذہب تبدیل کروایا۔

https://www.youtube.com/watch؟v=1in7NSVwyFs



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here