واقعہ کراچی کے علاقوں بفرزون میں ایک تین منزلہ عمارت میں پیش آیا (فوٹو ، فائل)

واقعہ کراچی کے علاقوں بفرزون میں ایک تین منزلہ عمارت میں پیش آیا (فوٹو ، فائل)

کراچی: بفرزون میں والدین کے غیر موجودگی میں گھروں میں آگ لگ رہی ہے

جمعرات کی دوپہر بفرزون سیکٹر پندرہ بی میں کیفے ٹوپیز کے قریب تین منزلہ عمارت کی تیسری منزل پر واقع گھر میں آگ لگ رہی ہے۔ اطلاع ملتے ہی ہی پولیس ، ریسکیو ورکرز اور فائر بریگیڈ موقع پر پہنچ گئے اور امدادی کارروائیوں کا آغاز کیا۔

ایس ایچ اور گبول ٹاؤنس انسپیکٹر روشن نے بتایا کہ واقعے کی اطلاع ملٹی ہی پولیس کی نفری موقع پر ہے اس کے اندر ہی اس کی آواز آرہی عمر کے گھر کا مرکزی دروازہ لاک تھا۔ معلومات کے بارے میں پتہ چلتا ہے کہ اس کے والد کے دفتر ہوا ہوا تھا اور ماں سلف سودے والے بازار چل رہی ہیں۔ گھر کے دروازہ لاک کے گھر میں داخلہ ممکن نہیں ہوسکا پڑوس کے گھر کی دیوار توڑنے دے گی کہ ہاتھوڑے کا بندوبست کیا ہوا؟

پولیس اور اہل علاقہ سخت مشکلات سے دوچار ہیں اور کسی طرح کی بھی کھانا نہیں کھا سکتے ہیں۔ اس دوران فائر بریگیڈ بھی موقع پر پہنچ گیا ، گھر کے لاک توڑ کے اندر داخل ہوکر فائر فائر بریگیڈ نے آگ پر قابو پالیااور دونوں بچوں کے ساتھ کھانا کھا لیا۔

ایس ایچ اور اس کے بارے میں مزید معلومات سے آگاہ کیا گیا ہے کہ کھانا پکانے کی شناخت سات سالہ عمیمہ دختر حارث اور اس کی چھوٹی بہن چھ سالہ حمنہ کی نام سے جاری ہے۔

ایک سوال کا جواب ایس ایس اور انسپیکٹر روشن نے بتایا کہ ابتدائی تحقیقات گھروں میں پیوست ہو رہی ہیں جبکہ پی پی ایس کی وائرنگ میں شارٹ سرکٹ ہوا میں آگ لگی ہے اور اس نے فلٹی چلی لی ہے۔ مذکورہ خاندان کچھ عرصہ قبل ہی اس گھر میں بٹور کرائے دار رہائش اختیار تھا۔

اس کے علاوہ ، بازار سے لے کر جب کھانا کھایا جاتا ہے تو والدہ واپس لوٹی کا حال ہی دیکھتے رہتے ہیں ، اہل محلہ ان کو دلاسا یقین نہیں دے رہے تھے ، اس سے دوسرے رشتے داروں کو مطمع کیا گیا تھا۔ اپنے والد کو بھی فوری طور پر اطلاع دی گئی۔

ہسپتال لے جانے سے پہلے دونوں بچوں کے اسپتال پہنچنے سے پہلے ہی دم توڑ چکی کی زندگی تھی۔ ان کے جسم پر بھی بری طرح جھلسے ہوئے ہیں۔ دلخراش واقعہ پیش کش کے بعد کے علاقوں میں سوگ کی فضا چھاگئی اور موقع پر موجود ہر آنکھ اشکبار دکھائی دی۔



Source by [author_name]

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here